عمران خان کا انڈیا کے خلاف بڑا فیصلہ، پاکستانی عوام کا سر فخر سے بلند

وزیر اعظم عمران خان نے جمعہ کے روز ہندوستان کے ساتھ تجارتی تعلقات کو معمول پر لانے سے مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ جب تک کشمیریوں کی خصوصی آئینی حیثیت بحال نہیں ہوتی تب تک یہ نہیں ہوسکتا۔

وزیر اعظم کی زیرصدارت ایک مشاورتی اجلاس کے مطابق جو ای سی سی کی جانب سے بھارت سے کپاس اور چینی کی درآمد کے فیصلے کو منسوخ کرنے کے لئے کیا گیا تھا، یہ فیصلہ کیا گیا تھا کہ پڑوسی ملک کے ساتھ تجارتی تعلقات اس وقت تک بحال نہیں ہوسکتے جب تک کہ آرٹیکل 370 کو کالعدم قرار دے کر بھارت کے آئینی حقوق کو بحال نہ کیا جائے۔

اس موقع پر وزیر اعظم عمران خان نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ یہ ان کا اصولی مؤقف تھا کہ مسئلہ کشمیر حل ہونے تک بھارت کے ساتھ تجارت کو معمول پر نہیں کیا جاسکتا۔
انہوں نے کہا کہ مسئلہ کشمیر کو نظرانداز کرتے ہوئے بھارت کے ساتھ تجارتی تعلقات کا آغاز کرنا ایک غلط تاثر دے گا۔

انہوں نے ہمسایہ ملک پر 05 اگست کے فیصلوں پر نظر ثانی کرنے پر زور دیتے ہوئے کہا، “پاکستان نے ہمیشہ اس ضرورت پر زور دیا ہے کہ ہندوستان دونوں ممالک کے لئے آگے بڑھنے کے لئے ایک مثبت ماحول پیدا کرے۔”

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.