کورونا سے بچنے کیلئے لاک ڈاؤن نہیں چلے گا۔۔ حکومت نے ملک بھر میں کرفیو لگادیا،باہرنکلنے پرمکمل پابندی،آج کی بڑی خبر

جنوبی افریقہ میں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لئے

صدر سیرل رامافوسا نے رات کے کرفیو میں توسیع کردی ہے۔بین الاقوامی ذرائع ابلاغ کے مطابق نئی پابندیوں کا اطلاق آج پیر سے کیا جائے گا، زیادہ لوگوں کو ایک ساتھ جمع ہونے پر بھی پابندی عائدکی گئی ہے۔حکومت کی جانب سے جاری کردہ نوٹی فیکیشن کے مطابق

ریستوران ، بار اور فٹنس سینٹرز رات اٹھ بجے بند ہو جائینگے جبکہ کرفیو رات گیارہ بجے سے صبح چار بجے تک نافذ رہےگا۔کرفیو کے دوران کسی کو غیر ٖضروری باہر نکلنے کی بھی اجازت نہیں ہوگی۔رفتار کو سست قرار دیتے ہوئے تنقید کی ہے۔ہانس کلوج کا کہنا تھا کہ یہ مت سوچیں کہ کورونا وائرس کی وبا ختم ہوگئی ہے۔ کورونا ویکسین لگنے کی شرح میں اضافے کی ضرورت ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ

وبا اس وقت ختم ہوگی جب 70 فیصد لوگوں کو ویکسین لگ جائے گی۔اے ایف پی کے مطابق اس وقت دنیا بھر میں 26 فیصد لوگوں کو کورونا ویکسین کی پہلی خوراک لگ چکی ہے، جبکہ یورپ میں 36.6 فیصد آبادی کو کورونا کی پہلی اور 16.9 فیصد کو دوسری خوراک لگ چکی ہے۔ہانس کلوج نے کہا کہ عالمی ادارہ صحت کو سب سے زیادہ تشویش کورونا کی نئی اقسام کی وجہ سے ہے۔ان کا کہنا تھا کہ مثال کے طور پر انڈین قسم بی1617 ایک دوسری

قسم بی117(برطانوی قسم) سے زیادہ پھیلتی ہے۔ کورونا کی انڈین قسم 53 ممالک میں پھیل چکی ہے۔ تاہم دنیا بھر میں نئے کیسز اور اموات میں گذشتہ پانچ ہفتوں میں کمی واقع ہوئی ہے۔ہانس کلوج نے کہا کہ اگرچہ کورونا ویکسینز نئی اقسام کے خلاف کارگر ثابت ہوئی ہیں لیکن

لوگوں کو محتاط رہنا ہوگا۔ یہ قابل قبول نہیں ہے کہ کچھ ممالک نوجوانوں کو ویکسین لگانا شروع کر دیں اور خطے کے باقی ملکوں نے طبی عملے اور بزرگ افراد کو بھی ویکسین نہ لگائی ہو۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.