ملک بھر میں فلورملز کی ہڑتال شروع ، آٹے کا سنگین بحران پیدا ہونے کا خدشہ

لاہور سیلز ٹیکس میں اضافے کے بعد فلورملزم ایسوسی ایشن نے

ہڑتال شروع کردی ،24 اور 25 جون کوگندم کی پسائی روک دی جائےگی،ملک میں آٹے کا سنگین بحران پیدا ہونے کا خدشات پیدا ہو گئے ۔ نجی ٹی وی کے مطابق وفاقی وزارت خزانہ اور فلورملز کے درمیان گندم سے نکلنےوالے چوکر پر سیلز ٹیکس

میں اضافے کا تنازعہ شدت اختیار کرگیا ہے، اور فلور ملز ایسوسی ایشن نے آج سے ملک بھر میں مرحلہ وار ہڑتال کا اعلان کردیاہے.فلو ملز ایسوسی ایشن کے مطاق تین روزہ علامتی ہڑتال کے تحت آج سے ملک بھر میں فلورملز گندم کی واشنگ نہیں کریں گی، 24 اور 25 جون کوگندم کی

پسائی روک دی جائے گی اور اس کے بعد بھی اگر حکومت کی جانب سے ٹیکس واپس نہیں لیا جاتا تو 30 جون سے ملک بھر کی فلورملزغیر معینہ مدت تک مکمل ہڑتال کریں گی جس میں سہولت بازاروں، اتوار بازاروں سمیت اوپن مارکیٹ میں آٹا سپلائی نہیں کیا جائے گا۔فلور ملز ایسوسی ایشن کے چیئرمی

ن عاصم رضا نے کہا ہے کہ دنیا بھر میں غذائی اشیاء پر ٹیکسز نہیں لگائے جاتے اور پاکستان میں اس کے برعکس ٹیکسز میں کٹوتی کی بجائے اضافہ کردیا گیا ہے، فنانس بل میں گندم کے چوکر کی سیل پر 17 فیصد کی شرح سے سیلز ٹیکس کا نفاذ کیا گیا ہے، سال 2015 میں بھی گندم کے چوکر کی سیلز پر

سیل ٹیکس کا نفاذ کیا گیا تھا لیکن بعد ازاں فلور ملنگ انڈسٹری کے احتجاج پرعوام کو سستے آٹے کی فراہمی کیلئے ختم کر دیا گیا۔ 2019 کے بجٹ میں سیلز ٹیکس کا استثنیٰ ختم کرکے دوبارہ سے گندم کے چوکر کی سیلز پر 7 فیصد کی شرح سے سیلز ٹیکس کا نفاذ کر دیا گیا

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.