سرکاری ملازمین کے لئے اپنی گاڑی، حکومت کا سکیم متعارف کرانے کا فیصلہ

اسلام آباد ) پنجاب حکومت سرکاری ملازمین کو قسطوں میں

گاڑیاں فراہم کرنے کے لئے خصوصی سکیم شروع کر رہی ہے۔ ذرائع کے مطابق حکومت خصوصی پالیسی کے تحت ملازمین کو قسطوں کے ذریعے اپنی کار خریدنے میں مدد کرے گی، حکومت کار کی ڈائون پیمنٹ خود کرے گی ، اس کے بعد حکومت سرکاری ملازم کی تنخواہ سے اس گاڑی کی قسط

کی کٹوتیکرتے رہے گی۔ جب تمام قسطیں پوری ہو جائیں گی تو ملازم اس گاڑی کا باضابطہ مالک بن جائے گا، یہ سکیم انتہائی فائدہ مند ہو سکتی ہے کیونکہ اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے شرح سود میں بھی کمی کر دی ہے، شرح سود میں نرمی سے گاڑیوں کی قسطیں بھی کم ہوں گی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ اس سکیم کے بارے میں مزید

تفصیلات ابھی تک سامنے نہیں آئی ہیں۔ اگر پنجاب حکومت یہ سکیم لانچ کرتی ہے تو یقینی طور پر پنجاب کی سڑکوں پر گاڑیوں کی تعداد میں اضافہ دیکھنے میں آئے گا، خصوصاً لاہور جیسے مصروف شہر میں مزید رش بڑھ جائے گا۔ہے اور یہ پاکستان کے تمام بڑے شہروں میں دستیاب ہوگی۔ دو جنوری کی شب لاہور میں

ایک آن لائن ایونٹ کے دوران ایک ہزار سی سی کی اس گاڑی کو پیش کیا گیا۔ اس گاڑی میں 993 سی سی کا چار سلینڈر انجن دیا گیا ہے۔1.0 ایل انجن 69 ہارس پاور فراہم کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے اور اس میں مینوئل ٹرانسمیشن سسٹم دیا گیا ہے، آٹومیٹک ورژن 2021 کے پہلی ششماہی کے دوران

کسی وقت پیش کیا جائے گا۔یہ گاڑی سوزوکی ویگن آر، سوزوکی کلٹس اورر کیا پیکانٹو کو براہ راست ٹکر دے گی اور یہ تینوں کے مقابلے میں زیادہ سستی بھی ہے۔بنیادی طور پر یہ ایک چینی گاڑی چیری کیو کیو ہے جسے پاکستان میں الفا کا نام دیا گیا ہے۔اس گاڑی کے فیچرز

میں پاور اسٹئیرنگ، پاور ونڈوز، 13 انچ ایلوئے وہیلز، ایل سی ڈی کیمرا، ریورس کیمرا، اے بی ایس بریک سسٹم اور دیگر قابل ذکر ہیں۔یونائیٹڈ الفا پاکستان میں 13 لاکھ 95 ہزار روپے میں فروخت کی جائے گی۔ کمپنی نے 2018 کے آخر میں اس وقت کی مقبول سوزوکی مہران کے مقابلے میں اپنی پہلی گاڑی براوو متعارف کرائی تھی، جس میں 800 سی سی انجن دیا گیا تھا۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.