عمران خان ’آزادی صحافت کے دشمن’ نامی فہرست میں شامل حکومت نے رپورٹ کو ’ربش‘ قرار دیدیا

صحافیوں کے تحفظ کی بین الاقوامی تنظیم ‘رپورٹرز ود آؤٹ بارڈرز’ نے ایسے ملکوں کے سربراہان کی فہرست جاری

کی ہےجو ان کے مطابق اپنے ملک میں سنسرشپ، صحافیوں کو قید کر کے انھیں تشدد کا نشانہ بنانے، ہراس کرنے یا انھیں نامعلوم افراد کے ہاتھوں قتل کروا کرآزادی صحافت کو مسلسل دبانے کی کوشش کر رہے ہیں۔بی بی سی

اردو کے مطابق ‘رپورٹرز ود آؤٹ بارڈرز’ نے اس فہرست کو ‘پریڈیٹرز آف پریس فریڈم’یعنی ’آزادی صحافت کے دشمنوں‘ کا نام دیا ہے۔ان 37 ممالک کے سربراہان میں پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان سمیت انڈیاکے وزیر اعظم نریندر مودی، سعودی عرب کے شہزادہ محمد بن

سلمان، ترکی کے طیب اردوغان، ایران کے رہبر اعلیٰ علی خامنہ ای، چین کے صدر شی جن پنگ، روس کے ولادیمیر پوتن اور شمالی کوریا کے کم جونگ ان کے نام بھی شامل ہیں۔جبکہ ایشیا کی دو خاتون سربراہان مملکت کا

شمار بھی اس فہرست میں کیا گیا ہے۔ ان میں بنگلہ دیش کی وزیر اعظم شیخ حسینہ اور ہانگ کانگ کی چیف ایگزیکٹو کیری لام شامل ہیں۔ جبکہ چند یورپی ممال

ک کے سربراہ بھی اسی فہرست میں نظر آتے ہیں۔’رپورٹرز ود آؤٹ بارڈرز’ کی شائع کردہ رپورٹ کے مطابق ان سربراہان مملکت میں سے چند گذشتہ دو دہائیوں

سے اپنے ملک میں آزادی صحافت کو سلب کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے ردعمل میں کہا ہے کہہ یہ رپورٹ ’ربِش‘ یعنی فضول ہے اور اس حوالے سے حکومت جلد اپنا تفصیلی مؤقف بھی دے گی۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.