ایک بار پھر خوشیوں کی پَری کی شعیب,،پوری دُنیا میں موجود مداح مبارکباد دینے لگے ملک اور ثانیہ مزرا کے گھر آمد،

ثانیہ مرزا اور شعیب اختر کے گھر مین خوشیوں کا سماں ،

دونوں میاں بیوی ایک دوسرے کو مبارکبادیے دینے لگے جبکہ چاہنے والوں کی جانب سے بھی مبارکبادوں کا تانتہ بندھ گیا ہے اور اپنی پسندیدہ جوڑی کو مبارکباد دینے کا سلسہ شروع ہوگیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق آج کے ہی روز دس سال قبلپاکستانیوں کی بھابھی

ثانیہ مرزا اور شعیب ملک شادی کے بندھن میں بندھے تھے اور دونوں آج اپنی شادی کی دسویں سالگرہ منا رہے ہیں۔ سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹ رپر شعیب ملک کی جانب سے اپنی اہلیہ کو دسویں شادی کی کامیاب سالگرہ پر مبارکبار دی گئی ہے اور نیک تمناؤں کا اظہار بھی کیا گیا ہے۔ خیال رہے کہ شعیب ملک اور ثانیہ مرزا کا ایک بچہ بھی ہے ، بیچ میں

یہ خبریں بھی آئی تھیں کہ ثانیہ مرزا کی جانب سے سیالکوٹ آنے پر منع کیا گیا تھا جس پر دونوں میاں بیوی کے درمیان تناؤ پیدا ہوگیا تھا ، اسی دوران اہم میچز کا سلسلہ بھی جاری تھا جس چھوڑ کر شعیب ملک اپنی اہلیہ کو منانے کی خاطر دبئی بھی گئے تھے، تاہم خاندان کے افراد کی جانب سے اس خبر کی

تصدیق یا تردید نہیں کی گئی بعد ازاں دونوں میاں بیوی کی جانب سے اس خبر کو من گھڑت اور بے بنیاد قرار دے دیا گیا تھا، دونوں کی جانب سے بتایا گیا تھا کہ وہ دونوں اپنی زندگی کو ہنسی خوشی جی رہے ہیں اس لیے مداح اس طرح کی منفی افواہوں کے ساتھ شکل بھی ملتی تھی۔ جب کبھی اسے ضرورت ہوتی تھی وہ ان سے پیسے لے لیا کرتا تھااور

واپسی تو کبھی ہوتی نہیں تھی۔ سلطان راہی اپنے کام میں بہت پکا تھا۔ اکثر اگر وہ کبھی دو ماہ کے لئے بھی ملک سے باہر جاتا اور واپسی پر اگر پارٹی نے شوٹنگ رکھ لی ہوتی تھی تو وہ وہاں سیٹ پر پہنچ کر کہتا تھا کہ ’’محمد سلطان راہی حاضر ہے۔‘‘ فلم انڈسٹری کی سینئر اداکارہ بہار بیگم کا سلطان راہی

کی فلمی زندگی میں بڑا ہاتھ اور ساتھ رہاہے۔ بہار بیگم کہتی ہیں کہ سلطان راہی ایک طوفان تھا، وہ جب آ جاتا تھا تو ’’وخت‘‘ پڑ جاتا تھا۔ نہ وہ خود بیٹھتا تھا اور نہ کسی اور کو بیٹھنے دیتا تھا۔ میں نے اس کا نام ہی ’’دنیا کا آٹھواں عجوبہ‘‘ رکھا ہوا تھا۔ ناصر ادیب، سلطان راہی، آغا حسن عسکری،

ان لوگوں نے جو کچھ مجھے کہا وہ میں نے کیا اور پھر ایک وقت وہ بھی آیا کہ سلطان راہی نے مجھے کہا کہ ’’ویڈیو فقرہ چھڈنا کتھے جے‘‘ میں نے بھی بولنا ہے۔ انہوں نے میری بڑی مدد کی تھی۔ اب میں انڈسٹری سے باہر کیوں آئی ہوں، اس کی وجہ یہ ہے کہ

لوگوں میں وہ جنون نہیں رہا۔سلطان راہی کی ایک دو فلمیں ہٹ ہو چکی تھیں، کئی مرتبہ ایسا ہوتا تھا کہ جہاں میں بیٹھی ہوتی ہوں وہ وہاں آ کر بیٹھتا ہے اور پھر چلا جاتا ہے۔ مجھے ایسا لگا کہ جیسے وہ مجھ سے دور دور رہتا ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.