دوستی کا حق ادا ، چین نے پاکستان پر ڈالروں کی برسات کر دی، 1 ارب سے زائد ڈالرز پاکستان کو موصول

کراچی )چین نے ایک مرتبہ پھر اس مشکل وقت میں پاکستان کے ساتھ دوستی

کا حق ادا کر دیاہے ، سٹیٹ بینک کو مزیدایک ارب 30کروڑ ڈالر موصول ہو گئے ہیں ۔تفصیلات کے مطابق سٹیٹ بینک کو چینی بینک سے ایک ارب 30 کروڑ ڈالر کی رقم موصول ہو گئی ہے ، یہ رقم ترقیاتی فنڈز ، کورونا نمٹنے اور غیر ملکی ادائیگیوں کیلئےدی گئی ہے ۔ یہاں یہ امر بھی قابل غور ہے کہ 23 جون سے

اب تک تین ارب ڈالر موصول ہو چکے ہیں ۔ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق ڈالر ملکی تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا، پاکستان کی کرنسی مارکیٹ میں امریکی کرنسی کی قیمت 168 روپے 18 پیسے تک پہنچ گئی۔ تفصیلات کے مطابق ملک کی معاشی مشکلات کم ہونے

کا نام نہیں لے رہیں۔ ملکی کرنسی مارکیٹ میں جو امریکی ڈالر کرونا وائرس بحران سے قبل مسلسل بہترین دکھاتے ہوئے 150 روپے کی سطح پر واپس پہنچ گیا تھا، وہی امریکی ڈالر اب چند ماہ کے دوران ملک کی تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا ہے۔بتایا گیا ہے کہ

پیر کے روز انٹر بینک میں امریکی ڈالر مزید52 پیسے کے اضافے سے168.18روپے کی بلند سطح پر پہنچ گیا، جبکہ اوپن مارکیٹ میں بھی ڈالر کی قدر میں اضافہ ہوا۔بتایا گیا ہے کہ پیر کو انٹر بینک میں روپے کے مقابلے میں ڈالر کی قیمتخرید52پیسے کے اضافے

سے 168.18روپے کی بلند ترین سطح تک چلی گئی۔ جبکہ اوپن کرنسی مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت 168.20 روپے تک پہچن گئی۔ واضح رہے کہ آج تک ملک کی تاریخ میں ڈالر کی بلند ترین قیمت 168 روپے ریکارڈ کی گئی تھی۔ تاہم پیر کے روز یہ ریکارڈ بھی

ٹوٹ گیا۔ دوسری جانب ڈالر کے علاوہ سعودی ریال اور اماراتی درہم کی قیمتوں میں بھی اضافہ دیکھنے میں آیا۔ بتایا گیا ہے کہ سعودی ریال کی قیمت خرید 43.90روپے سے بڑھ کر44روپے اور قیمت فروخت 44.40روپے سے بڑھ کر44.50روپے ہوگئی۔ جبکہ

اماراتی درہم کی قیمت خرید 44.90روپے سے بڑھ کر45روپے اور قیمت فروخت 45.40روپے سے بڑھ کر45.50روپے ہوگئی ۔کو ایشین انفرااسٹرکچرانویسٹمنٹ بینک کی جانب سے پچاس کروڑ ڈالر موصول ہوگئے، پچاس کروڑ ڈالر کو وڈنائنٹین ایکٹو رسپانس پروگرام کے تحت دیے گئے ہیں۔ اس سے پہلے عالمی بینک اور ایشیائی ترقیاتی بینک سے

بھی پچاس ، پچاس کروڑ ڈالر موصول ہو چکے ہیں ،اس رقم سے کورونا وبا کے دوران لاک ڈاؤن سے معیشت کو پہنچنے والے نقصانات پر قابو پانے میں مدد ملے گی۔ ایک ہفتے کے دوران عالمی مالیاتی اداروں کی جانب سے اسٹیٹ بینک کو ایک ارب باہتر کروڑ پچاس لاکھ ڈالر موصول ہوچکے ہیں، ماہرین کا کہنا ہے کہ

مختلف منصوبوں کے لیے ملنے والی اس رقم سے حکومت کی مالی مشکلات میں کمی آئے گی۔ معاشی تجزیہ کار خرم شہزاد کا کہنا ہے کہ عالمی مالیاتی اداروں سے ملنے والی رقم اگلے ہفتے زرمبادلہ کے زخائر میں شامل ہوگی، 1 ارب 72 کروڑ ڈالر ملنے کے بعد ملکی زرمبادلہ کے ذخائر 18 ارب ڈالر ہوجائیں گے اور

زخائر میں اضافے پر روپے پر بڑھتے دباو میں کمی ہوگی ۔خیال رہے اپریل میں بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کی جانب سے پاکستان کو ایک ارب 39 کروڑ ڈالر کی رقم موصول ہوئی تھی، رقم قسط ریپڈفنانس انسٹرومنٹ کےتحت موصول ہوئی۔ اعلامیے میں

کہا گیا تھا کہ موجودہ غیریقینی صورتحال میں کورونا کے معاشی اثرات سامنے آئیں گے، آئی ایم ایف کی مدد سے بین الاقوامی ذخائرمیں بہتری آئے گی اور عارضی اخراجات میں اضافےکیلئےبجٹ کومالی اعانت فراہم ہوگی۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.