یہ درخت مختلف بیماریوں کو دور کرنے کے ساتھ ساتھ وزن بھی کم کرتا ہے ۔۔ جانیے یہ کونسا درخت ہے اور اس کے پتوں کا استعمال کیسے کریں؟

متعدد لوگ سوہانجنا اور اس کے درخت کی افادیت سے لاعلم ہوتے ہیں۔ سوہانجنا انسان کو کس قسم کے کرشماتی فوائد فراہم کر سکتا ہے جان کر آپ بھی اس کے پتوں کا استعمال کرنے دوڑ پڑیں گے۔

سوہانجنا کو مورنگا بھی کہا جاتا ہے جو بہت زیادہ غذائیت سے بھرپور ہوتا ہے۔ اس کا پیڑ لمبا اور املی کی شکل سے ملتا ہے ، اس پر سفید پھول ہوتے ہیں جس پر ہری رنگ کی پھلیاں لگی ہوتی ہیں۔اس کا پودے زیادہ تر جنوبی پنجاب میں پائے جاتے ہیں۔اس کا انگریزی نام مورینگا ہے۔

ایک مضمون کے مطابق، سوہانجنا کی پھلی میں دودھ کے مقابلے میں 17 گنا زیادہ کیلشیم پایا جاتا ہے، دہی سے 9 گنا زیادہ پروٹین، گاجر سے 4 گنا زیادہ وٹامن اے، بادام سے 12 گنا زیادہ وٹامن ای، کیلے سے 15 گنا زیادہ پوٹاشیم اور پالک سے 19 گنا زیادہ فولاد شامل ہوتا ہے۔

سوہانجنا کے پتوں کی خصوصیات دیکھ کر بیشتر ممالک اس کو بطور غذا بھی استعمال میں لاتے ہیں۔یہاں تک کہ یورپی مملک میں اس کے عرق سے گولیاں، کیپسول اور فوڈ سپلیمنٹ بناکر فروخت کیے جا رہے ہیں۔سوہانجنے کی پھلیاں ہڈیوں کی مضبوطی میں بہت معاون ہوتی ہے اور یہ خواتین کے لیے بہت فائدہ مند ہوتی ہیں۔

سوہانجنا کا ایک او ربہترین فائدہ یہ ہے کہ پینے کے پانی کو بھی صاف کرتا ہے۔ طبی ماہرین کے مطابق 2 گرام بیج کا پاؤڈر 10 لیٹر پانی سے 99 فیصد جراثیم مارنے کے لیے کافی ہوتا ہے۔ پاکستان کے کافی علاقے ایسے ہیں جہاں پینے کا صاف پانی غریبوں کو مل نہیں پاتا اور مجبورا انہیں تیلاب کا پانی پینا پڑتا ہے۔ اگر اس حوالے سے آگاہی فراہم کی جائے کہ اور اس کے طریقہ کار سے لوگوں کو آگاہ کیا جائے تو لاکھوں افراد گندہ پانی پینے سے بچ سکیں گے۔

سوہانجنا کےپتوں کا پاؤڈر بھی صحت کے لیے مفید ہوتا ہے۔ اس کے پاؤڈر کے فوائد جانتے ہیں۔ اس میں موجود پوٹاشیم دماغ اور اعصابی نظام کو طاقتور بناتا ہے۔ دماغ کے خلیوں کی عُمر، دماغی صلاحیتوں اور ذہانت میں بھی اضافہ کرتا ہے۔

اس میں وٹامن اےپایا جاتا ہے جوکہ آپ کی آنکھ، جلد، دِل اور معدے کے امراض کو کنٹرول کرنے میں مدد دیتا ہے۔ سوہانجنامیں کیلشیم دودھ سے چار گنازیادہ پایا جاتا اور یہ آپ کے ہڈیوں کی مضبوطی کے لیئے مفید ہے۔ اس میں آئرن پایا جاتا ہے جوکہ خون کے سُرخ خلیے بنانے میں مدد فراہم کرتاہے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.